Thursday, 21 May 2020

Naseem Hijazi to Ertugrul - Saga of Imported saviours


As a Pakistani nation, we suffer from a severe identity crisis, We don't own our people but love to hear the stories of saviours invading subcontinent to bless us with Islam 


We love carving out new idols, every few yrs or so from Muhammad bin Qasim, Yousaf bin Tashfin to General's pet called Zorro and now Ertugrul Gazi. we've definitely come far.



Don't get me wrong, I've watched all the seasons of Ertugrul and thoroughly enjoyed the cinematography, story twists, characterization and it was kind of Halal-ish replacement to  Game of Thrones.

But I watched as work of fiction which 'revolved' around a bit of history the way you'd watch any season on Netflix or Amazon Prime.


It's in so many ways so similar to work of fiction by well-known writer of Naseem Hijazi.



Naseem Hijazi was a Pakistani writer who really mastered the art of Historical fiction and it was sold to the masses as being gospel, I remember a relative recommended me his books during my teenage stating it's Islamic history.

In stock of my school Library, Naseem Hijazi was definitely the most read author during my teenage, You could never find any book in stock it to borrow.


Truth is much stranger than fiction itself but when you mix it up with a blend of religious spices, let it simmer on the heat of young blood top it up with some prophecies, then BOOM.


You have a mindless robot willing to blow himself up anywhere for the sake of a purpose that's larger than life.

This was what the majority of Hijazi's work was like - We all like to dwell in past and tell our kids stories about the time gone and every Nation does it. However Pakistani Hybrid regime definitely has mastered the art to some extent.

Muhammad Bin Qasim, Khaak Aur Khoon, Aakhri Maarka (The last battle of Somnath), Aur Talwar Toot Gayi were absolute masterpieces in the genre of "Historical fiction" for Urdu readers.

Much of Hijazi's work was dramatised in Pakistan and a whole generation was born with a mind-set that paved the way for socially awkward boys to fantasize about characters similar to "Halime Sultan" and wanting to wage jihad against evil forces of West. 

It all fitted in very well with the backdrop of the Afghan-Soviet war, timing was crucial. 
But as Pakistanis, we love living in new delusions and fantasies every now n then. 
Also, it was well-timed too as many "5thiye" (5th Gen warfare Twitterati trolls) just recovering from Ehd-e-Wafaa now have their newfound love Ertugrul.


After airing of Ertugrul season, majority Pakistani believe that Erdogan is the reincarnation of Ertugrul and all it takes is a bit of Youtube search to see many videos of pseudo-anchors and media analysts turned historians talking about prophecies how Erdogan shall rise and 2023 is the year Turkey will take back control of Hijaz.


Whether its Mubashir Luqman, Sabir Shakir or official Mullah Maulana Tariq Jamil everyone is portraying launch of Ertugrul as Turk-Pak alliance of some sort which will bring back the glorious days of past.




They don't just stop there - there's been memes/videos in circulation comparing the dissenting intellectuals/community with negative characters of Ertugrul and calling for them to be beheaded in same fashion how Ertugrul handled the betrayal.

Literally free for all business, ranging from Ertugrul and antichrist being linked to Ghazwa Hind, Erdogan being Ertugrul of the time and Pak-Turk alliance (which is non-existent and recent fiasco of Imran Khan bending over backwards to fall into the lap of MBS) touching new horizons in 2023!

In a nutshell, I'm rather sad to see the Hybrid regime of Pakistan turning a Turkish historical fictional saga of Ertugrul into a full-blown propaganda indoctrination tool for which I can only thank #Selectors as surely Imran Khan Niazi or his team wouldn't have had half the brain to come up with such stunt.

A hero or not but I'm sure Ertugrul never dreamt that his character or legacy would be used by Pakistani regime to try and cover up the failures thousands of kilometres away from his homeland.

Let's see after Ehd-e-Wafa and Urdu dubbing of Ertugrul what new indoctrination/misdirection tool is deployed as Gen Asim Saleem Bajwa is back and with a vengeance.

Thursday, 5 September 2019

6September - Day that reshaped Pakistan




6 September 1965 was the day which was the catalyst to fully turn Pakistan into a 'security state' instead of a social welfare state.


Pakistan lost all wars against India, but our fake patriotism demands us to celebrate the stupidity & irresponsibility of power-hungry Generals instead of holding them responsible for these 
failures.

Operation Gibraltar was executed by Pakistani army to try and bring some traction to the Kashmir cause by infiltration in IOK and force India to the conference table without provoking general war.

Pakistani establishment wasn't prepared for the war, didn't anticipate Indian forces to cross the Wagah Border and start a full-blown war.

This miscalculation resulted in heavy fatalities near BRB Canal (Barki region) where Major Aziz Bhatti was martyred in fierce fighting against Indian army.

Operation Gibraltar due to two major assumptions Pakistani army made

1) Establishment based this Operation to be use the resentment element on the ground and turn it into a full-fledged armed revolt against India in Kashmir
2) Second assumption was that India will never risk starting all-out war.

Both assumptions made by Pakistani army proved to be wrong

Both assumptions were proven wrong when on #6September India attacked Pakistan across the international border without a warning or a declaration of war in retaliation of Operation Gibraltar.

This war further gave birth to in-house Mujahideen groups like Laskhar-e-Tayyaba & Jaish e Muhammad. It pretty much became part of Pakistan's covert foreign policy fully managed by establishment of the country till Musharraf rose to power and banned all these groups.


Operation Gibraltar was a failure and 6 September should have been the day to analyse & learn from our mistakes. Instead, it became the day our country became a hostage to military quarters, since 1965 war all our foreign policy decisions were taken by establishment of the country and civilian rulers were only used as a cover. 



Friday, 9 August 2019

مودی کو پاکستانی حکومت کا منہ توڑ جواب

رات کے پچھلا پہر تھا
ہُو کا عالم تھا
ایسے میں "ایف ڈبلیو او" کے دفتر کا فون بجا
دوسری طرف سے سخت آواز میں ایک شخص مخاطب ہوا
"کرینیں کتنی دستیاب ہیں؟"

"آفیسر: "جناب 3/4 کا بندوبست ہو سکتا ہے
"کال کرنے والا :" باقی کرینیں کہاں ہیں؟
"آفیسر :"جناب ، وہ تو کرتارپور میں زیرِ استعمال ہیں
"کال کرنے والا :" بےغیرتو!  ساری کرینیں وہاں لگا دیں؟

آفیسر : جناب وزیراعظم صاحب اور 
سپہ سالار کا سخت حکم تھا کہ جلد از جلد کام مکمل ہونا چاہئے ،    ہماری سالمیت کا سوال ہے

کال کرنے والا: " اچھا اچھا ٹھیک ہے، جتنی بھی کرینیں ہیں وہ اکٹھی کرو اور جاتی عمرہ کا رخ کرو ، ساتھ میں نفری اور کنٹینرز بھی لے جانا ‫" 

"آفیسر : " جناب ادھر کیا بنانا ہے؟
کال کرنے والا : " بنانا نہیں ، گرانا ہے ، جو چار دیواری بنی ہے گرا دو"
آفیسر: " جناب آپ کہہ رہے ہیں کہ تین بار منتخب وزیراعظم کے گھر کی چار دیواری گرا دیں؟"
"کال کرنے والا : " ہاں یہی کہہ رہا ہوں
اس گفتگو کیبعد مورخ نے دیکھا کہ حکومت کی پوری مشینری حرکت میں آئی

....مودی کو جواب دینے کا اس سے بہترین انداز کوئی نہیں ہوسکتا تھا 


میں عمران نیازی کی اس سوچ اور نظریے کو سلام پیش کرتا ہوںواقعی ایک آفاقی سوچ کا حامل شخص ہی ایسا قدم اٹھا سکتا تھا جیسا عمران خان نے اٹھایا


 دس اگست کو یہ آپریشن انجام پا رہا تھا.....جبکہ  پانچ اگست کو بھارت نے مقبوضہ کشمیر کو تین حصوں میں تقسیم کر کے بھارت ‫‫میں ضم کر لیا

اور رات کے اس پہر پاکستانی حکومت نے جواباً کاروائی کا فیصلہ کیا اور مودی کے "یار" کے گھر پر چڑھائی کرنے کا فیصلہ کیا
شاید ہمارے جوانوں کے بس میں یہی تھا ، مودی کے دانت کھٹے کرنے کا راستہ جاتی عمرہ سے ہو کر جاتا تھا

مودی سوچ بھی نہی سکتا ہو گا کہ  کشمیر کو بھارت میں ضم کرنے کے جواب میں عمرانی حکومت مودی کے یار کے گھر پر ہلّہ بول دے گا

مودی کے یار اور اُس کی بیٹی کو اِس حکومت نے پہلے ہی جیل میں ڈال رکھا تھا


ہر اول دستے کے فرائض "ایف ڈبلیو او" انجام دے رہا تھا جو پاکستانی فوج کا انجینئرنگ وِنگ ہے ، ہدف جاتی عمرہ تھا
تمام چینلز کو اطلاع دے دی گئی کہ محاز فتح ہونے کی کوریج کرنے کیلئے وقوعے کی جگہ پر پہنچ جائیں 
...کرینیں اپنے مقام پر لگ چکی تھیں ، پے درپے ضربیں لگنا شروع ہوئیں

ہوا اللہ اکبر کی صداؤں سے گونج اٹھی  
ایف ڈبلیو او کے جانباز سپاہی و ٹھیکیداران اپنے جان کی پرواہ نہ کرتے ہوئے میدان میں کود پڑے

چار دیواری سے اکٹھی ہونے والی اینٹیں ٹرکوں میں لوڈ کروانے لگے تاکہ یہ اینٹیں کرتارپور راہداری کی بنیادوں میں لگیں اور بھارت کو بھرپور جواب دیا جا 
سکے


Tuesday, 18 June 2019

بونوں کا معاشرہ


مرشد جون نے کہا تھا "یہ بونوں کا معاشرہ ہے"


میں اکثر یہ سوچتا ہوں کہ اِتنے بڑے بڑے ناموں کے بیچ بھی جون کیسے اپنے آپکو بونا محسوس کرتے تھے یا پورے معاشرے کو بونا کہنا.. 

اگر وہ اِس عہد میں ہوتے تو کیا محسوس کرتے؟
ہم اجتماعی طور پر گھٹیا اور اوسط درجے سے نیچے کے لوگ ہیں
ذہنی پستی و کم فہمی کیساتھ ساتھ بے انتہا قسم کی ڈھٹائی بھی ہم میں کُوٹ کُوٹ کر بھر چکی ہے
ہم وہ لوگ ہیں جو اپنے پستہ سوچ اور کم ظرفی سے بخوبی واقف ہیں اور اِس پر فخر کرتے ہیں..

کتابوں کی جگہ tiktok ، dubsmash, Instagram, YouTube نے لے لی ہے.. 

ہم ڈگری سے لدے گدھے بنا رہے ہیں ، ڈگری holder جاہل پیدا کرے رھے ہیں ہم ، جو ایک کنویں کے مینڈک ہیں اور اخلاق ، گفتار ، میں کوئی ملکہ نہیں رکھتے بلکہ اپنے آپکو عقلِ کُل سمجھتے ہیں..


یہی حال ہر شعبے میں ہے اب وہ ادب ہو ، سیاست ہو یا فن ہو.. 
ہر جگہ پستہ قامت انسانوں کے نمونے دیکھنے کو ملیں گے..

دلوں کو جوڑنے والے ، لوگوں کو جوڑنے والے ، فرق ختم کرنے والے ، لوگوں کو قریب لانے والے  نہ علماء رھے نہ سیاستدان ..

ہر طرف جیسے مار دو پکڑ لو ، کافر کافر ، لٹیرا ، چور ڈاکو کی آوازیں ہیں..

علماء اپنا تعمیری کام بھول کر فرقہ واریت کو ہوا دے رہے ہیں اور سیاستدان صرف اپنے حریفوں کو گالیاں دینے میں مصروف..
جون کا زمانہ بونوں کا معاشرہ تھا تو یہ زمانہ تو یقیناً "حشرات" کا ہوا..

کیڑے مکوڑوں کا زمانہ جو ہیہئت کے اعتبار سے انسان ہیں بس!

بلاشبہ ہم اجتماعی طور پر عقل، فکر ، سمجھ اور معاشرتی طور پر انحطاط کا شکار ہیں‫ اور شعور و فکر نام جیسی دولت کی شدید قلت کا شکار ہیں ، ہماری انسان ہونے کی واحد دلیل اگر کوئی باقی رہ گئی ہے تو وہ یہ کہ "ہم جگہ گھیرتے ہیں"




Wednesday, 22 May 2019

زینب سے فرشتہ تک - سفاک و دندرہ صفت ہم!

کیا لکھوں؟
فرشتہ تمہارا کیوں نوحہ لکھوں؟

زینب ہو یا فرشتہ ہم بحیثیت معاشرہ گل سڑ چکے ہیں اور ہمیں اپنے اس گلی سڑی لاش سے نہ تو تعفن کا احساس ہوتا ہے نہ 
ہم اس کے کھوکھلا پن کا اعتراف کرنے کیلیے تیار ہیں

ہمدردی ، دردمندی ، درد شناسی کے جزبات سے عاری ایک ہجعم ہیں ہم جنہیں مخالف کے ناک پر بیٹھی مکھی بھی نظر آتی ہے اگر نہیں نظر آتے تو اپنے بدبودار ، انسانیت سوز رویے اور ریاستی طور پر خون میں لت پت ہاتھ 

ہم مدینہ ثانی کے باسی
ہم اسلام کے ناقابلِ تسخیر قلعہ کے سپاہی
ہم بھارت میں لٹتی ہر عصمت پر تنقید کرنے والے
اپنے ملک میں جاری اس درندگی کیخلاف ہماری زبانیں گنگ

مجھے یہ لکھتے ہوئے عجیب تکلیف کا سامنا ہے اور دعا ہے کہ یہ جھوٹ ہی ہو مگر سچ یہی ھے اس معاشرے کو دیمک 
اندر تک چاٹ چکی ہے

ہم صرف اور صرف"میں" کا بوجھ اٹھائے زندہ ہیں


وہ معاشرہ جو اپنے آپ کو مغرب سے کہیں بہتر کہتا ہو اور اسلام کا گہوارہ ، ریاستِ مدینہ کہلوانے پر مصر ہو اُس معاشرے میں اگر یکے بعد دیگرے زینب و فرشتہ جیسے واقعات رونما ہوں تو میں یہی کہوں گا کہ اس معاشرے کے علماء یا تو نہایت منافق و بےاثر زبان کے مالک ہیں جن کی تبلیغ کانوں سے نیچے نہیں جاتی یا پھر  انسانیت کا دین سے کوئی سروکار نہیں اور ایک لادین معاشرہ دراصل اسلام کی اصل روح کا پاسبان ھے
ہم تو فقط لفظوں کی حد تک "ٹھیکہ دارانِ اسلام" ہیں 

ایک اسلامی معاشرہ ،مسجدوں مدرسوں سے محصور ملک میں بھی معصوم کی آہ و بکا سننے والا کوئی نہیں


 ساہیوال میں کنبہ بھون دیا جاتا ہے حاکمِ وقت کے کان پر جوں تک نہیں رینگتی  ہم بحیثیت قوم و معاشرہ اخلاقی و سماجی پستی کی اُن گہرائیوں کو چُھو رہے جس میں بہتری ہوتی نظر نہیں آتی...

سلام ہے مغرب کے اُس معاشرے کو جہاں مسلمان بیٹیوں کی عزتیں محفوظ ہیں اور لعنت ھے ایسے اسلامی معاشرے پر جہاں مسلمانوں کی بیٹیاں ہی لوٹی جاتی ہیں اور کہا جاتا ھے وہ تو "افغانی" تھی 


ہم یہاں اپنی بیٹیوں کی عصمتیں خود ہی تار تار کرنے میں مصروف ہیں اور یہ عمل کرنے کیبعد ہم کہتے ہیں وہ تو پاکستانی تھی ہی نہیں

ظالمو!  انسان تو تھی ؟؟